Tuesday, 30 April 2019

ویزاپابندیوں کا معاملہ، تنازعہ بڑھ گیا،امریکا نے فہرست پاکستان کے حوالے کردی، پاکستان کا ایک بارپھر دوٹوک انکار


اسلام آباد (این این آئی)پاکستان پر ویزا پابندیوں کے معاملہ پر امریکا نے غیرقانونی تارکین وطن کی فہرست پاکستان کے حوالے کردی۔سفارتی ذرائع کے مطابق پاکستان کی تصدیق کے بعد غیر قانونی تارکین وطن واپس لینے کی یقین دہانی کر دی گئی۔ پاکستان نے موقف اختیار کیا کاہ تصدیق کے بغیر کسی بھی غیر قانونی تارکین وطن کو واپس نہیں لیا جائے گا۔ ذرائع نے بتایاکہ پاکستان میں امریکی قونصلرآپریشن میں کوئی تبدیلی نہیں آئی۔ سفارتی ذرائع نے بتایاکہ پاکستانیوں کو امریکی ویزے بدستور جاری کئے جارہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق امریکا نے پاکستان سے غیرقانونی تارکین وطن واپس لینے کا مطالبہ کیا تھا۔ ہوم لینڈ سیکیورٹی ڈیپارٹمنٹ نے پاکستان پر ویزہ پابندی لگانے کی سفارش کی تھی۔ سفارتی ذرائع کے مطابق امریکی وزارت خارجہ نے سفارش پر ابھی تک عملدراذمد شروع نہیں کیا۔

لیگی رہنما اورسابق وفاقی وزیر بلیغ الرحمان کی فیملی حادثے کا شکار ہو گئی،اہلیہ اور ایک بیٹا جاں بحق،بیٹا،بیٹی اور ڈرائیور شدیدزخمی


گوجرہ/لاہور(این این آئی)مسلم لیگ (ن) کے رہنما و سابق وفاقی وزیر بلیغ الرحمان کی فیملی گوجرہ کے قریب ٹریفک حادثے کا شکار ہو گئی جس کے نتیجے میں ان کی اہلیہ اور ایک بیٹا جاں بحق ہو گئے۔جبکہ بیٹا،بیٹی اور ڈرائیور شدید زخمی ہیں،حادثے میں گاڑی مکمل طور پر تباہ ہو گئی،مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے حادثے میں اہلیہ اور بیٹے کے انتقال پر بلیغ الرحمان سے اظہار تعزیت کرتے ہوئے ان کیلئے صبر جمیل کی دعا کی ہے۔ ترجمان نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ بلیغ الرحمان کی فیملی گاڑی میں بہاولپور سے اسلام آباد جارہی تھی کہ گوجرہ کے قریب حادثہ پیش آ گیا۔ ان کی اہلیہ موقع پر ہی جاں بحق ہو گئیں جبکہ دو بیٹے، ایک بیٹی اور ڈرائیور شدید زخمی ہو گئے جنہیں طبی امداد کے لئے مقامی ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ان کا ایک بیٹا بھی دم توڑ گیا۔ ترجمان کے مطابق بیٹا، بیٹی اور ڈرائیور شدید زخمی ہیں۔ حادثے میں گاڑی مکمل طور پر تباہ ہو گئی۔ قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف، پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز اور مرکزی ترجمان مریم اورنگزیب نے سابق وفاقی وزیربلیغ الرحمن کی اہلیہ کے ٹریفک حادثے میں انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ اہلخانہ کے نام اپنے پیغام میں رہنماؤں نے کہا کہ حادثے کی خبر سن کر بے حددکھ ہوا۔ اللہ تعالی مرحومہ کو جنت میں اعلی ترین مقام عطا فرمائے اور ان کے بچوں کو صحت دے اور تمام اہل خانہ کو یہ ناقابل تلافی نقصان برداشت کرنے کی ہمت دے۔

پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی بریگیڈ ہیڈ کوارٹر پر میزائلوں سے حملہ کیا وہاں پر بھارتی آرمی چیف بھی موجود تھے لیکن ان کو براہ راست ٹارگٹ کرنے کے بجائےجنرل بپن راوت کے دائیں بائیں میزائل کیوں گرائے گئے؟سنسنی خیز انکشافات


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)گزشتہ روز ڈی جی آئی ایس پی آرمیجر جنرل آصف غفور نے ایک اہم پریس کانفرنس کی جس میں سینئر صحافی اور تجزیہ کار حامد میر بھی شریک تھے ۔ اس اہم پریس بریفنگ کے بعد نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بریفنگ کا بنیادی مقصد یہ نظر آرہا تھا ۔جب فروری کے آخر میں بھارت اور پاکستان کے درمیان کشیدگی تھی اور پاکستان نے انڈیا کے جہاز بھی گرائے تھے تو ان دنوں میں پاکستانی فوج کا جو ردعمل تھا وہ کافی سخت تھااو ر انڈیا کا کافی نقصان ہوا تھا لیکن پاکستان نے کوشش کی تھی کہ صورتحال زیادہ کشیدہ نہ ہو تو جو انڈیا کا نقصان ہورہا تھا اور جو کارروائی پاکستانی فوج کررہی تھی اس کا اعلان نہیں کیا جارہا تھا۔تو اب جبکہ ہندوستان کا میڈیا اور حکومت ہے وہ اب بھی کشیدگی ختم کرنے میں سنجیدہ نظر نہیں آرہا تو ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے سوالات کے انداز میں کچھ معلومات دنیا کے ساتھ شیئر کی ہے بس صرف انہوں نے یہ بتایا ہے کہ جب آپ میزائل کی بات کررہے تھے میزائل فائر کرنے کی تیاری کررہے تھے توہم نے ایک دو نہیں چھ میزائل آپ پر فائر کئے تھے اور جو مقبوضہ جموں کشمیر میں ایک نوشہرہ کا علاقہ ہے وہاں پر جو بریگیڈ ہیڈ کوارٹر ہے انہوں نے یہ کھلے الفاظ میں کہا کہ وہاں پر حملہ ہوا تو کیا آپ ہمیں بتائیں گے کہ وہاں پر کون کون موجود تھا تو میں نے بعد میں ان سے یہ سوال کیا تھا کہ کیا وہاں پر انڈین آرمی چیف موجود تھے تو انہوں نے جواب میں کہا کہ یہ جی یہ کسی انڈین جرنلسٹ سے پوچھیں اور انہوں نے تردید نہیں کی کہ وہاں پر انڈین آرمی چیف موجود تھے نہیں موجود تھے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ پاکستان کا ردعمل جو ہے وہ بہت سخت تھا۔پاکستان نے ایک ایسی جگہ پر بھی حملہ کیا جہاں پر انڈین آرمی چیف خود موجود تھے لیکن جان بوجھ کر براہ راست ان کوٹارگٹ نہیں کیا گیا ۔دائیں بائیں میزائل گرائے گئے تاکہ ان کو میسج مل جائے کہ اگر آپ نے پاکستان کے کسی شہر کو ٹارگٹ کیا تو پھر ہم براہ راست آپ کو ٹارگٹ کر سکتے ہیں تو یہ جو ڈی جی آئی ایس پی آر کی پریس کانفرنس تھی تو اس میں نہ صرف بھارت کو ایک سخت پیغام دیا گیا ہے کہ کشیدگی ابھی ختم نہیں ہوئی اور اگر آپ نے پاکستان پر بے بنیاد الزامات لگانے کا سلسلہ بند نہ کیا اور جو لائن آف کنٹرول پر آپ کر رہے ہیں اگر وہ آپ نے بند نہ کیں تو پاکستان دوبارہ بھی آپ کے جو حملے ہیں ان کا انتہائی سخت جواب دے سکتا ہے ۔

ڈیل میں بڑی پیشرفت! عمران خان شریف فیملی کو معافی دینے کیلئے تیار لیکن قومی خزانے میں رقم واپسی کے علاوہ کونسی شرط رکھ دی؟اہم انکشاف کردیا گیا


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)معروف صحافی و تجزیہ کار ذوالفقار راحت نے نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میں پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی جانب سے حکومت سے رابطوں کی کوششوں اور معافی تلافی کی باتوں سے متعلق پہلے ہی بتا چکا ہوں جس کے بعد ایک اور سینئر سیاستدان نے دعویٰ کیا ہے کہشریف خاندان کی غیر سیاسی شخصیات نے وزیراعظم عمران خان سے رابطے کیے ہیں اور ان کو پیغامات بھیجے ہیں۔وزیراعظم کو واٹس ایپ پر بھیجے گئے پیغامات میں گزارش کی گئی ہے کہ جانے دیں، معاف کر دیں۔ یہ تمام پیغامات ریکارڈ کا حصہ ہیں۔ اسی طرح پیپلز پارٹی کے بھی کچھ لوگوں نے وزیراعظم عمران خان کو پیغامات دئے ہیں جو ان کے موبائل فون کے ریکارڈ کا حصہ ہیں۔انہوں نے یہاں تک دعویٰ کیا ہے کہ ہو سکتا ہے کہ مستقبل میں وزیراعظم عمران خان ان تمام پیغامات کو سب کے سامنے لے آئیں۔ذوالفقار راحت نے کہا کہ جنرل (ر) امجد شعیب نے بھی یہی کہا ہے کہ بات آگے بڑھ گئی ہے جبکہ میری ذاتی اطلاعات بھی یہی ہیں کہ لندن میں اس حوالہ سے کافی سنجیدہ بات چیت چل رہی ہے۔ شہباز شریف یہاں ترلے منتیں کر کے ، تمام حربے استعمال کرنے کے بعد لندن چلے گئے ہیں اور انہیں لندن جانے دیا گیا ہے کیونکہ اگر ریاست چاہے تو وہ نہیں جا سکتے تھے۔ ان کے لیے ایک راستہ بنایا گیا جس کے بعد وہ لندن چلے گئے۔ان کا وہاں جانا اس لیے ضروری تھا کہ حسن اور حسین نواز کے پاس پیسہ پڑا ہوا ہے،اسحاق ڈار صاحب بھی وہیں ہیں۔ شہباز شریف کے کندھوں پر آج کل بہت بوجھ ہے کیونکہ ان کی حسن اور حسین نواز سے پیسوں کے معاملے پر بات چل رہی ہے لیکن وہ نہیں مان رہے اور پیسے دینے کے معاملے کو ٹال رہے ہیں۔اسحاق ڈار نے بھی کہا ہے کہ میں دیکھوں گا کچھ کروں گا۔ ذوالفقار راحت نے کہا کہ شریف خاندان تکنیکی طور پر ایک راستہ نکالے گا جس کے بعد ہوسکتا ہے کہ ان کو ریلیف مل جائے۔ہو سکتا ہے کہ یہ لوگ کسی خلیجی ملک یا مشرق وسطیٰ کے کسی دوست ملک کو کہہ دیں کہ وہ پاکستان کے قومی خزانے میں پیسے بھیج دیں ، اس حوالے سے کچھ اطلاعات یہ بھی ہیں کہ پیسے قومی خزانے میں آنا شروع ہو گئے ہیں۔ لیکن عمران خان کا ماننا ہے کہ تحریری بیان ہو جس میں یہ لوگ بے ضابطگی کا اعتراف کریں۔واضح رہے کہ سابق وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بھی کہا تھا کہ شریف فیملی کیلئے پلی بارگین کا آپشن موجود ہے اس کے علاوہ ان کے پاس بچنے کا کوئی اور راستہ نہیں ہے ۔

طویل انتظار ختم۔۔۔!!! عمران خان اور ثاقب نثار مہمند ڈیم کا سنگ بنیاد کب رکھیں گے؟ اعلان کردیا گیا


اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیرا عظم عمران خان اور سابق چیف جسٹس میاں ثاقب نثارپرسوں مہمند ڈیم کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔نجی ٹی وی کے مطابق مہمند ڈیم صوبہ خیبر پختونخوا میں دریائے سوات پر بنایا جائے گا، ڈیم تعمیر کے بعد 1.2 ایم اے ایف پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش کے ساتھ 800 میگاواٹ بجلی بھی بنائے گا۔ چارسدہ ، نوشہرہ اور پشاور کے مکینوں کوسیلابی پانی سے بھی بچائے گا۔ایک لاکھ 60 ہزارایکڑ زمین کو پانی کے فراہمی کے ساتھ ساتھ 16 ہزار ایکٹر اضافی زمین کو بھی زیر کاشت لایا جائے گا۔ پشاور کے شہریوں کو 30 کروڑ گیلن پینے کا بھی پانی میسر ہو گا اور اس سے 52 ارب روپے کا سالانہ فائدہ ہوگا۔حکومت نے ڈیم کی تعمیر کا ٹھیکہ ڈیسکون کمپنی کو دیا ہے، منصوبے پر 183 ارب خرچ ہونگے۔واضح رہے کہ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار نے ڈیم فنڈ بھی قائم کیا تھا جس میں اب تک کئی ارب روپے جمع ہوچکے ہیں۔

عمران خان ، پیوٹن ملاقات کب ہو گی؟ بڑا اعلان کردیاگیا


اسلام آباد(سی پی پی )وزیراعظم عمران خان نے گذشتہ ہفتے چین کا دورہ کیا تھا جس کے بعد کہا گیا کہ پاکستانی اور روسی حکام سفارتی سطح پر ایک دوسرے کو قریب لانے میں ناکام رہے۔ بیلٹ اینڈ روڈ فورم اجلاس کے موقع پر عمران خان اور پیوٹن کی سائیڈ لائن ملاقات نہ ہو سکی۔تاہم اس حوالے سے میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ وزیر خارجہ نے چین میںروسی صدر اور عمران خان کے مابین ملاقات نہ ہونے کے معاملے پر وضاحت پیش کر دی ہے۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کی روسی صدر پیوٹن کے ساتھ ملاقات طے ہی نہیں تھی۔روسی صدر پیوٹن کے حوالے سے غلط خبریں پھیلائی گئیں۔شاہ محمود قریشی نے مزید بتایا گیا کہ روسی صدر کے ساتھ عمران خان کی ملاقات جلد ہو گی۔

حاسدین کی پرواہ نہیں، وزیراعلیٰ شکایات سیل کا پیغام ہر یوسی تک پہنچائیں گے، جھوٹے پراپیگینڈے پر چئیرمین شکایت سیل خالد عزیز لون کا کرارا جواب



اس کے بعد خالد عزیز لون چئیرمین شکایت سیل نے اس کا کرارا اور ثبوت کیساتھ جواب دیا


Monday, 29 April 2019

آسان پہیلی کا مشکل جواب تلاش کریں


کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک)انٹرنیٹ صارفین کی ذہانت کو جانچنے کے لیے نت نئی پہیلیاں سامنے آتی ہیں اسی طرح ایک اور تصویر شیئر کر کے صارفین کو چیلنج دیا گیا ہے کہ وہ درست جواب تلاش کریں۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹس پر مختلف لوگوں کی جانب سے نت نئی پہلیاں شیئر کی جاتی ہیں کیونکہ صارفین اُن کے جواب بہت دلچسپی کے ساتھ تلاش کرتے ہیں۔ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی بعض تصاویر بظاہر تو بہت آسان دکھائی دیتی ہیں مگر جب انہیں حل کرنے یا جواب تلاش کرنے کے لیے بیٹھا جائے تو صارفین سرپکڑ لیتے ہیں۔ یہ بھی تلاش کریں: آسان مگر مشکل پہیلی، کون سی بلی جوس پی سکے گی؟ جواب تلاش کریں اسی طرح ایک نئی تصویری پہیلی سامنے آئی جس میں صارفین کو چیلنج دیا گیا ہے کہ وہ جواب تلاش کریں کون سا کپ چائے سے بھرے گا۔ تصویر میں دیکھا جاسکتا ہے کہ اوپر کیتلی اور نیچے 7 کپ رکھ ہوئے ہیں جن کی طرف مختلف راستے جارہے ہیں، صارفین کو چیلنج دیا گیا ہے کہ وہ بتائیں کون سے کپ میں پہلے چائے بھر جائے گی؟ تصویر کو غور سے دیکھیں اور ذہین ہیں تو ایک منٹ کے اندر درست جواب تلاش کریں یقینی طور پر آپ بھی تصویر یکھنے کے بعد درست جواب تلاش کرنے کے لیے راستے دیکھ رہے ہوں گے اور خیال ہوگا کہ فلاں نمبر کپ تک چائے پہلے پہنچ جائے گی۔ کیا آپ نے درست جواب تلاش کیا؟ اگر نہیں تو نیچے والی تصویر کو ایک بار پھر غور سے دیکھیں۔ اب تک انٹرنیٹ پر شیئر ہونے والی پہیلیوں میں یہ واحد پہیلی ہے کہ جس کا کوئی جواب نہیں کیونکہ نیچے جانے والے راستے یا تو بند ہیں یا پھر کھلے ہیں اس لیے کسی بھی کپ میں چائے نہیں پہنچ سکتی، تمام نقائص کو سرخ رنگ سے دکھایا گیا ہے۔ اسے بھی تلاش کریں: کون سا گلاس دودھ سے پہلے بھرے گا؟ جواب تلاش کریں کیا آپ درست جواب تلاش کرنے میں کامیاب ہوئے تھے، کمنٹس میں ضرور بتائیں۔

گلگت بلتستان اسمبلی کی واحد خاتون وزیر ثوبیہ مقدم برطرف،جانتے ہیں وجہ کیا بنی؟‎


گلگت (آن لائن)وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن سے اختلاف سامنے آنے کے بعد صوبائی کابینہ میں شامل واحد خاتون وزیر ثوبیہ مقدم کو وزارت سے برطرف کردیا گیا۔ ثوبیہ مقدم خواتین کی خصوصی نشست پر ضلع دیامر سے رکن اسمبلی منتخب ہوئی تھیں۔انہیں امور نوجوانان اور ویمن ڈیولپمنٹ کی وزارت کا قلم دان دیا گیاتھا۔خاتون رکن پر اسمبلی میں 2 دیگر وزرا کے ساتھ مل کر ہم خیال گروپ تشکیلدینے کا الزام بھی لگایا جاتا ہے جبکہ نظم و ضبط کی خلاف ورزی پر انہیں شو کاز نوٹس بھی جاری کیا گیا تھا۔وزیراعلی گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمٰن نے خاتون وزیر کو ان کے عہدے سے ہٹانے کا تحریری بیان میڈیا میں بھی جاری کیا۔ثوبیہ مقدم نے رابطہ کرنے پر بتایا کہ وہ دیگر ہم خیال وزرا سے مشاورت کر رہی ہیں اور آئندہ کے لیے جلد مشترکہ حکمت عملی کا اعلان کریں گی۔ برطرف خاتون وزیر کا تعلق پاکستان مسلم لیگ (ن) سے ہے۔

’’میں آپ کی یہ درخواست قبول نہیں کر سکتا‘‘ اسد عمر کا عمران خان کو صاف انکار


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)سابق وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر کا وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے چین جانے کی دعوت قبول کرنے سےانکار،میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیر اعظم عمران خان اپنے وفد کے ہمراہ اس وقت چین کے دورے پر ہیں ، معلوم ہوا ہے کہ وزیر اعظم نے اسد عمر کو اپنے ساتھ چین جانے کی درخواست کی  تھی لیکن اسد عمر نے معذرت کرلی۔واضح رہے اسد عمرکو وزارت خزانہ سے الگ کیے جانے کے بعد وزیراعظم عمران خان انہیں وفاقی کابینہ میں دوبارہ شامل کرنے سے اب تک قاصر ہیں۔ذرائع کے مطابق عمران خان، اسد عمر کو ان کی پسند کی کوئی بھی وزارت دینے کیلئے تیار ہیں۔ تاہم سابق وزیر خزانہ اسد عمر اب تک وفاقی کابینہ میں دوبارہ شامل ہونے کیلئے راضی نہیں ہوئے۔شیخ رشید بھی انہیں منانے میں تاحال ناکام نظر آتے ہیں۔

تحریک انصاف کے سینئر رہنما سے رہا نہ گیا۔۔۔!!! اسد عمر کےچند ہی منٹوں کے دوران دھماکہ خیز ٹوئٹس ایسی باتیں کہہ ڈالیں کہ حکومتی صفوں میں کھلبلی مچ گئی


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)پی ٹی آئی کے سینئر رہنما اور سابق وزیرخزانہ اسد عمر نے ٹویٹر پیغام میں کہا ہے کہ قوموں کوآگے بڑھنے کے لیے قربانیاں دینی پڑتی ہیں لیکن یہ قربانی سب کو مل کردینی چاہیے ،کسی ایک کو نہیں۔انہوں نے کہا کہ طاقتوروں کا قانون اور عوامی فلاح دونوں ساتھ نہیں چل سکتے ۔ سابق وزیرخزانہ نے مصورِ پاکستان کے شعر کا حوالہ دیا : ’تقدیر کے قاضی کا یہ فتوا ہے ازل سے،ہے جْرم ضعیفی کی سزا مرگ مفاجات‘۔اس سے پہلے انہوں نے ایک اور ٹویٹ میں کہا کہ وہ ایک کتاب پڑھ رہے ہیں جس میں لکھا ہوا تھاکہ برابری کے حقوق بھی صرف طاقتوروں کے درمیان ہوتے ہیں کمزور ہمیشہ خسارے میں رہتا ہے اس لیے ہمیں یہ بات سمجھنی چاہیے اور پاکستان کو دنیا میں طاقتور بن کر سامنے آنا ہو گا۔واضح رہے کہ اسد عمر نے گزشتہ دنوں وزیر خزانہ کے عہدے سے استعفیٰ دیکر کوئی بھی نئی وزارت لینے سے انکار کردیا تھا۔

وزیر اعظم کا کامیاب دورہ چین مکمل،کتنے معاہدوں پر دستخط ہوئے؟ کیا کچھ طے پایا؟دورہ چین کے حوالے سے اعلامیہ جاری


اسلام آباد (این این آئی) پاکستان اور چین نے دو طرفہ تعاون کے فروغ اور سی پیک کو مضبوط بنانے اور افغان امن عمل کو جاری رکھنے کے لئے مشترکہ کاوشوں پر اتفاق کیا ہے۔ پیر کو  دفتر خارجہ کی جانب سے وزیراعظم کا دورہ چین مکمل ہونے پر جاری اعلامیہ میں کہاگیاکہ وزیراعظم نے 25 تا 28 اپریل چین کا سرکاری دورہ کیا۔ترجمان دفتر خارجہ  نے کہاکہ وزیراعظم نے چینی صدر کی دعوت پر دوسری بیلٹ اینڈ روڈ کانفرنس میں شرکت کی۔ ترجمان کے مطابق وزیراعظم نے بیجنگ عالمی ہارٹیکلچر نمائش میں شرکت کی۔ ترجمان کے مطابق وزیراعظم کے ہمراہ وفاقی وزراء کے وفد نے بھی چین کا دورہ کیا۔ ترجمان کے مطابق وزیراعظم کی چینی صدر اور وزیراعظم سے اہم ملاقاتیں ہوئیں۔ ترجمان کے مطابق ملاقاتوں میں دو طرفہ تعاون کے فروغ اور سی پیک کو مضبوط بنانے پر اتفاق کیا گیا۔ ترجمان کے مطابق دونوں ممالک نے علاقائی عالمی امور بشمول افغان امن عمل کو جاری رکھنے کے لئے مشترکہ کاوشوں پر اتفاق کیا ہے۔ ترجمان  کے مطابق چینی وزیراعظم سے ملاقات میں فری ٹریڈ معاہدے سمیت متعدد تجارتی معاہدوں پر دستخط کئے گئے۔ ترجمان  کے مطابق وزیراعظم کی تاجکستان ازبکستان ایتھوپیا ملائیشیا مصر اور کرغزستان کے رہنماؤں سے بھی ملاقاتیں ہوئیں۔ ترجمان  کے مطابق وزیراعظم نے آئی ایم ایف کے مینیجنگ ڈائریکٹر اور عالمی بینک کے سی ای او سے بھی ملاقاتیں کیں۔ ترجمان کے مطابق وزیراعظم نے بیجنگ ہارٹیکلچر نمائش میں پاکستان پویلین کا دورہ بھی کیا۔  پاکستان اور چین نے دو طرفہ تعاون کے فروغ اور سی پیک کو مضبوط بنانے اور افغان امن عمل کو جاری رکھنے کے لئے مشترکہ کاوشوں پر اتفاق کیا ہے۔

پریس کانفرنس میں بتایا 2 بھارتی پائلٹ گرفتار ہوئے ہیں لیکن پھرایک پائلٹ کی ٹویٹ کیوں کی؟ترجمان پاک فوج نے بالآخر 2ماہ بعدحقیقت سے پردہ اٹھا دیا


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)27 فروری2019 کو بھارتی طیارے گرائے جانے کے بعد پریس کانفرنس میں 2 بھارتی پائلٹس کا ذکر کیا اور پھر ٹویٹ کر کے ایک پائلٹ کا کیوں کہا؟ترجمان پاک فوج نے وضاحت کردی ۔میجر جنرل آصف غفور نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ جب اس طرح کا جنگی ماحول پیدا ہو تو زمین سے معلومات موصول ہوتی ہیں۔اگر آپ ایک جانب کھڑے ہیں اور طیارہ تباہ ہونے کے بعد پائلٹ نے ایجیکٹ کیا ہے تو آپ کہیں گے کہ پائلٹ نظر آیا اور ایسا ہی کسی اور جگہ کھڑا شخص بھی کہے گا اور یوں معلومات موصول ہوتی ہیں۔میں نے پریس کانفرنس میں دو پائلٹس کا ذکر رپورٹ کی بنیاد پر کہا تھا کیونکہ پریس کانفرنس میں آنے سے پہلے ایک پائلٹ کی اطلاع تھی اور پھر میڈیا اور دیگر رپورٹس میں دو پائلٹس کی بات ہونے لگی اور میں نے بھی سوچا کہ شاید 2 ہی ہوں کیونکہ جہاز بھی 2 گرائے گئے تھے۔پریس کانفرنس کرنے کے بعد جب میں واپس گیا تو اس وقت تک رپورٹس کلیئر ہو چکی تھیں اور پھر میں نے اس حوالے سے تصدیق تو معلوم ہوا کہ پائلٹ ایک ہی تھا مگر دو مختلف جگہ سے رپورٹ ہونے کے باعث یہ ابہام پیدا ہوا۔ پریس کانفرنس میں دو پائلٹس والی بات تو مان لی گئی لیکن بعد میں کی جانے والی ٹویٹ کو نہیں مانا جا رہا، حالانکہ وہ بات بھی تو میں نے ہی کی ہے۔ترجمان پاک فوج نےمزید کہا ہے کہ 2 مہینے ہو گئے بھارت ان گنت جھوٹ بولے جارہا ہے ،28فروری کو بھارت نے کتنی گن پوزیشن تبدیل کی وہ بھی اپنے عوام کو بتائے ۔بھارت کچھ کرنا چاہتا ہے تو پہلے نوشہرہ سٹرائیک اور بھارتی جہازوں کے گرنے کا حساب ذہن میں رکھے ۔بھارتی میڈیا جا کر دیکھے کہاں کہاں میزائل گرائے تھے۔بھارت اپنا میڈیا پاکستان بھیج دے ہم انہیں سہولیات دینگے پاکستان نے بھارت کے روپے میں تبدیلی ڈال دی ، لیکن ہمارا رویہ تبدیل نہیں ہوسکتا ۔ اگر 1971میں آج کا میڈیا ہوتا تو بھارتی حالات بے نقاب کرتا تو مشرقی پاکستان علیحدہ نہیں ہوتا،جب بات ملکی دفاع اور سلامتی کی ہو تو پاکستان ہر قسم کی صلاحیت اپنائے گا۔

Sunday, 14 April 2019

موسم گرما کی چھٹیاں کب سے ہونگی ؟پنجاب حکومت نے تمام تعلیمی اداروں میں موسم گرما کی تعطیلات کا مراسلہ جاری کر دیا


سرگودھا(این این آئی)محکمہ تعلیم پنجاب نے صوبہ بھر کے تمام تعلیمی اداروں میں موسم گرما کی تعطیلات کا مراسلہ جاری کر دیا ہے جس کے تحت یکم جون تا14 اگست تک تعلیمی ادارے بند رہیں گے۔ذرائع کے مطابق محکمہ تعلیم پنجاب نے صوبہ بھر کےتمام تعلیمی اداروں میں موسم گرما کی تعطیلات کا مراسلہ جاری کیا ہے، جس کے مطابق یکم جون تا14 اگست تک تعلیمی ادارے بند رہیں گے، جبکہ پہاڑی مقامات پر موسم گرما کی تعطیلات16 جولائی سی29 جولائی تک ہونگی اور عید الفطر گرمیوں کی چھٹیوں میں آئیگی

بہا الدین زکریا ایکسپریس بڑی تباہی سے بچ گئی ،جانتے ہیں دہشتگردو ں نے کیا منصوبہ بنا رکھا تھا؟


ٹھٹھہ (آن لائن) ملتان جانے والی بہا الدین زکریا ایکسپریس حادثے سے بال بال بچ گئی ،ٹھٹھہ جنگ شاہی ریلوے سٹیشن سے بم برآمد ہونے پرمسافروں سے بھری ٹرین کو ریلوے حکام نے سٹیشن سے چند فرلانگ پہلے ہی روک لیا۔بتایاگیا ہے کہ ٹھٹھہ جنگ شاہی ریلوے سٹیشن سے بم برآمدہوا، بہا الدین زکریا ایکسپریس ریلوے سٹیشنپہنچنے ہی والی تھی کہ حکام نے ٹرین کو پیچھے رکوا دیا جس سے بڑا حادثہ رونما ہوتے ہوتے رہ گیا۔بم ڈسپوزل اسکواڈ کو فوری طور پر طلب کر لیا گیاجس نے موقع پر پہنچ کر بم ناکارہ بنادیا۔پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بعد ازاں سرچنگ کے بعد ٹریک کو کلیئر قرار دیدیا جس پر ریلوے ٹریفک بحال کر دی گئی۔

پاکستان سٹیزن پورٹل کا کمال،5ماہ قبل لاپتہ رمشا گھر پہنچ گئی ، غلط رپورٹ بھجوانے پرڈی آئی جی انویسٹی گیشن لاہورفارغ


لاہور(سی پی پی )وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے سٹیزن پورٹل پر درج ہونے والی غلط رپورٹ بھجوانے پر ڈی آئی جی انویسٹی گیشن لاہور سمیت دو پولیس افسران کو معطل کردیا ہے جبکہ پانچ ماہ قبل لاہور کے علاقے مناواں سے لاپتہ ہونے والی نوجوان لڑکی رمشا واپس گھر پہنچ گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق پنجاب سے تعلق رکھنے والی خاتون نے بیٹی کی بازیابی کیلئے پاکستان سٹیزن پورٹل پرشکایت درج کرائی تھی۔جس کے بعد وزیراعظم آفس نے تحقیقات کا حکم دیا تھا۔وزیر اعظم ہائوس کو پولیس افسران نے رپورٹ ارسال کی جو غلط تھی جس کے بعد اعلیٰ حکام نے پنجاب حکومت کو غلط رپورٹ بھجوانے پر تحقیقات کا حکم دیا تھا۔وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے سٹیزن پورٹل پر شکایت سے متعلق غلط رپورٹ بھجوانے کامعاملے پر ڈی آئی جی انویسٹی گیشن اور او ایس ڈی سمیت دو افسران کو معطل کرتے ہوئے ڈی جی اینٹی کرپشن سے ایک ہفتے میں رپورٹ طلب کرلی۔

پی ٹی آئی کو ایک اور نیا چیلنج درپیش،اگلے 5سال کے دوران کتنی غیر ملکی ادائیگیاں کرنی ہیں؟حکومت سر پکڑ کر بیٹھ گئی


اسلام آباد(سی پی پی) حکومت کواگلے پانچ سال کے دوران 37 ارب 63 کروڑ ڈالرز کی غیر ملکی ادائیگیاں کرنا ہوں گی۔سرکاری دستاویز کے مطابق حکومت کو پانچ سال میں اکتیس ارب ڈالرز قرض جبکہ 6 ارب 60 کروڑ سود ادا کرنا ہوگا۔رواں مالی سال کی ادائیگیاں سات ارب ڈالرز سے زائد کی ہیں۔حکومت نے رواں سالکے دوران ایک ارب 48 کروڑ ڈالرز سود کی مد میں ادا کرنا ہے۔ آئندہ  مالی سال 8ارب اور سال 2020- 2021میں 7ارب 45 کروڑ ڈالرز سے زائد قرض ادا کرناہے۔الی سال 2021-2022 میں 6ارب 45 کروڑ ڈالرز قرض ادا کرنا ہوگا۔حکومت کو مالی سال 2022-2023 میں 6 ارب 49 کروڑ ڈالرز کی ادائیگی کرنا ہوگی۔